سندھ کابینہ میں ردو بدل، 4وزارء فارغ، 4 نئے شامل

سندھ کابینہ میں 4 نئے وزراء کا اضافہ ہوگیا، گورنر سندھ نے نئے وزراء سے حلف لیا، ساجد جوکھیو، جام خان شورو، گیان چند اور ضیاء عباس کابینہ میں شامل، نثار کھوڑو اور سہیل انور سیال سے وزارت لے لی گئی، وزیراعلیٰ کے 3 نئے مشیروں کا بھی تقرر کردیا گیا۔

پیپلزپارٹی کی سندھ حکومت میں پہلی بار ذوالفقار علی بھٹو کے شہر لاڑکانہ سے کوئی رکن صوبائی کابینہ میں شامل ہیں، سہيل انور سيال، ہری رام کشوری لال، فراز ڈيرو اور نثارکھوڑو سے وزارت واپس لے لی گئی۔

سندھ کابینہ میں 4 نئے وزراء اور وزیراعلیٰ کے 3 مشیروں کا اضافہ کردیا گیا، نئے وزراء کی سادہ سی تقريب حلف برداری گورنر ہاؤس میں ہوئی، عمران اسماعيل نے جام خان شورو، ضياء عباس شاہ، ساجد جوکھيو اور گيان چند سے حلف ليا۔

فياض بُٹ، رسول بخش چانڈيو اور منظور وسان وزیراعلیٰ سندھ کے نئے مشیروں میں شامل ہیں، صغير قريشی حيدرآباد اور ارسلان شيخ سکھر کی بہتری کيلئے وزيراعلیٰ سندھ کی معاونت کريں گے۔

تقریب حلف برداری میں مراد علی شاہ، اسپیکر سندھ اسمبلی سراج درانی، اراکین سندھ اسمبلی کے علاوہ مرتضٰی وہاب اور چیف سیکریٹری سندھ سمیت دیگر افسران نے شرکت کی۔

رپورٹ کے مطابق گیان چند کو وزیر اقلیتی امور اور ساجد جوکھیو وزیر سماجی بہبود کا قلمدان دیا گیا ہے، جام خان شورو اور ضیاء عباس شاہ کے قلمدان کا اعلان بعد میں کیا جائے گا۔

کچھ صوبائی وزراء کے قلمدان بھی تبدیل کئے گئے ہیں، وزیر بلدیات ناصر حسین شاہ کو محکمہ پبلک ہیلتھ کا اضافی قلمدان دیدیا گیا، تیمور تالپور جنگلات کے وزير ہوں گے، اسماعیل راہو سے محکمہ زراعت کا قلمدان واپس لے لیا گیا، انہیں محکمہ جامعات و تعلیمی بورڈز کا قلمدان سونپ ديا گيا، ایڈمنسٹریٹر کراچی مرتضیٰ وہاب سے ماحولیات اور ساحلی ترقی کے قلمدان واپس لے کر اسماعیل راہو کے سپرد کردیئے گئے۔

سعید غنی سے بھی وزارت تعلیم کا قلمدان واپس لے کر انہیں وزارت اطلاعات دیدیا گیا، سردار شاہ کو وزارت تعلیم کا اضافہ قلمدان دیدیا گیا

اپنا تبصرہ بھیجیں